ویاپم گھوٹالہ معاملہ پھر گرم، بی جے پی لیڈروں میں ہلچل

RushdaInfotech December 19th 2022 urdu-news-paper
 ویاپم گھوٹالہ معاملہ پھر گرم، بی جے پی لیڈروں میں ہلچل

بھوپال-18دسمبر (ایجنسی)مدھیہ پردیش میں ویاپم گھوٹالہ ایک بار پھر گرم ہونے والا ہے اور اس سے حکمراں بی جے پی کے کئی لیڈر اور کئی موجودہ اور سابق وزراء کے نام آنے کاخدشہ ہے، جس کی وجہ سے بھگوا بریگیڈ میں کھلبلی مچ گئی ہے- ویاپم گھوٹالہ ریاست کی سیاست میں گزشتہ ایک دہائی سے سرخیوں میں ہے کیونکہ اس معاملے سے جڑے 50 سے زیادہ لوگوں کی نہ صرف موت ہوچکی ہے بلکہ دو ہزار سے زیادہ لوگ سلاخوں کے پیچھے بھی جاچکے ہیں -جہاں سی بی آئی معاملہ کی جانچ کر رہی ہے وہیں اسپیشل ٹاسک فورس (ایس ٹی ایف) بھی کارروائی میں مصروف ہے- اس معاملے میں بی جے پی اور آرایس ایس سے وابستہ کئی لیڈر ماضی میں نشانہ بن چکے ہیں - سابق وزیر لکشمی کانت شرما کے علاوہ بی جے پی اور کانگریس کے کئی لیڈر بھی جیل جا چکے ہیں - یہی نہیں، آرایس ایس کے دو بڑے عہدے دار بھی اس گھوٹالے کی زد میں آچکے ہیں -اب تازہ ترین معاملہ 6/ اکتوبر 2014 کو سابق وزیر اعلیٰ اور راجیہ سبھا ممبر دگ وجئے سنگھ کی شکایت پر ایس ٹی ایف کے ذریعہ درج کیا گیا مقدمہ ہے- اس معاملے میں آٹھ لوگوں کو ملزم بنایا گیا ہے جنہوں نے میڈیکل کالج میں داخلہ لیا تھا- یہ شکایت تقریباً آٹھ سال پرانی ہے اور اب ایس ٹی ایف نے اس پر مقدمہ درج کر لیا ہے- جس کی وجہ سے ایف آئی آر کی ٹائمنگ پر سوالات اٹھ رہے ہیں -دگ وجئے سنگھ نے اپنی شکایت میں کہا ہے کہ 2006 کے بعد ویاپم کے زیادہ تر امتحانات میں کچھ لوگوں نے مالی فائدہ حاصل کرنے کے مقصد سے ویاپم کے عہدیداروں اور مدھیہ پردیش حکومت کے وزراء، بی جے پی کے سینئرز کے ساتھ ملی بھگت کی- رہنما اور دوسروں کے بلاواسطہ یا بالواسطہ تعاون کے ساتھ-ڈگ وجے سنگھ کی شکایت میں کہا گیا ہے کہ مختلف میڈیکل کالجوں میں دھوکہ دہی سے داخلے کے امکانات ہیں، اس کی وجہ یہ ہے کہ منتخب طلبا جن کے رہائشی پتے ایک جیسے ہیں، ایسے معاملات جن میں طلباء نے اتر پردیش بورڈ سے 10ویں اور 12ویں جماعت کا امتحان پاس کیا ہے اور مدھیہ پردیش کا ڈومیسائل سرٹیفکیٹ مشکوک ہے- نیز امتحانی فارم میں چسپاں تصویر اور سیٹ الاٹمنٹ میں چسپاں تصویر میں فرق ہے-
معاملے کی جانچ ایس ٹی ایف نے کی اور آٹھ طلباء مشتبہ پائے گئے- تحقیقات میں اس بات کی بھی تصدیق ہوئی ہے کہ ان طلباء نے سال 2008ء اور 2009 کے امتحان میں حل کرنے والوں کو بٹھایا اور امتحان پاس کرنے کے بعد بھوپال کے گاندھی میڈیکل کالج میں داخلہ لیا-جب سے دگ وجئے سنگھ کی آٹھ سال پرانی شکایت پر ایس ٹی ایف نے مقدمہ درج کیا ہے، سیاسی حلقوں میں چرچے ہیں - یہاں تک کہا جا رہا ہے کہ آنے والے دنوں میں ایک بار پھر بی جے پی کے کئی بڑے لیڈر مشکل میں پڑ سکتے ہیں، اتنا ہی نہیں بڑے عہدوں پر بیٹھے ان بااثر لوگوں کے نام بھی زد میں آ سکتے ہیں -


Recent Post

Popular Links