الیکشن کمشنر ایسا ہوناچاہئے جو وزیراعظم کیخلاف کارروائی کر سکے سپریم کورٹ کی مداخلت،کہا! مرکزی حکومت جمعرات کوارون گوئل کی تقرری سے متعلق فائل پیش کرے

RushdaInfotech November 24th 2022 urdu-news-paper
 الیکشن کمشنر ایسا ہوناچاہئے جو وزیراعظم کیخلاف کارروائی کر سکے سپریم کورٹ کی مداخلت،کہا! مرکزی حکومت جمعرات کوارون گوئل کی تقرری سے متعلق فائل پیش کرے

نئی دہلی: 23نومبر (ایجنسی) سپریم کورٹ نے بدھ کو زبانی طور پر کہا کہ ملک کو ایک ایسے چیف الیکشن کمشنر (سی ای سی) کی ضرورت ہے جو وزیراعظم کے خلاف بھی کارروائی کر سکے۔عدالت نے مرکزی حکومت سے گزشتہ ہفتے مقرر کیے گئے الیکشن کمشنر(ای سی) کے انتخاب کے طریقہ کار کی وضاحت کرنے کو بھی کہا۔ جسٹس کے ایم کی سربراہی میں 5 رکنی آئینی بنچ جوزف نے کہا کہ ہمیں ایک سی ای سی کی ضرورت ہے جو وزیر اعظم کے خلاف بھی کارروائی کر سکے۔بنچ میں جسٹس اجے رستوگی، جسٹس انیرودھا بوس،رشی کیش رائے اور سی ٹی روی کمار نے کہا کہ مثال کے طور پر فرض کریں کہ وزیر اعظم کے خلاف کچھ الزامات ہیں اور سی ای سی کو کارروائی کرنی ہے، لیکن سی ای سی کمزور ہے اور کارروائی نہیں کرتا ہے۔ دوسری جانب سپریم کورٹ نے مرکزی حکومت سے کہا ہے کہ وہ جمعرات (24نومبر)کو الیکشن کمشنر ارون گوئل کی تقرری سے متعلق فائل عدالت میں پیش کرے۔ عدالت نے یہ ہدایت چیف الیکشن کمشنر اور الیکشن کمشنرز کی تقرری کو مزید شفاف بنانے کے مطالبے کی سماعت کے دوران دی ہے۔ ججوں نے کہا کہ حالیہ تقرری سے انتخاب کے جاری عمل کی بہتر بنانے میں مد د ملے گی۔بنچ نے مرکز کے وکیل سے پوچھا کہ کیا یہ نظام کی مکمل خرابی نہیں ہے۔ سی ای سی کو سیاسی اثر و رسوخ سے آزاد ہونا چاہیے اور اسے خود مختار ہونا چاہیے۔ بنچ نے کہا کہ یہ وہ پہلو ہیں جن پر آپ (مرکز کے وکیل) کو غور کرنا چاہئے کہ ہمیں سی ای سی کو منتخب کرنے کیلئے ایک آزاد بڑے ادارے کی ضرورت کیوں ہے۔ بنچ نے زبانی طور پر کہا کہ کمیٹیاں کہتی ہیں کہ تبدیلی کی اشد ضرورت ہے اور سیاستدان بھی اس کا مطالبہ کرتے ہیں، لیکن کچھ نہیں ہوتا۔ مرکز کی نمائندگی اٹارنی جنرل آر وینکٹ رامانی، سالیسٹر جنرل تشار مہتا اور ایڈیشنل سالیسٹر جنرل بلبیر سنگھ نے کی۔ بنچ نے مرکز کے وکیل سے یہ بھی کہا کہ وہ الیکشن کمشنر کی تقرری کے عمل کو ظاہر کرے۔ سابق بیوروکریٹ ارون گوئل نے 19 نومبر2022 کو اس عہدے پر تعیناتی کے بعد پیر کو الیکشن کمشنر کا عہدہ سنبھال لیا ہے۔ سشیل چندر کے ریٹائرمنٹ کے بعد اس سال مئی سے تین رکنی کمیشن میں الیکشن کمشنر کا عہدہ خالی پڑا تھا۔ سماعت کے دوران اٹارنی جنرل نے کہا کہ کنونشن کے مطابق الیکشن کمشنر کی تقرری کرتے وقت ریاست اور مرکزی حکومت کے تمام سینئر بیوروکریٹس اور افسروں کو مدنظر رکھا جاتا ہے اور اس کی سختی سے پیروی کی گئی ہے۔


Recent Post

Popular Links