مفتی اعظم پاکستان رفیع عثمانی کا انتقال دیوبند میں ہوئے تھے پیدا، نماز جنازہ آج

RushdaInfotech November 20th 2022 urdu-news-paper
مفتی اعظم پاکستان رفیع عثمانی کا انتقال  دیوبند میں ہوئے تھے پیدا، نماز جنازہ آج

کراچی:19نومبر(ایجنسی) صدر جامعہ دارالعلوم کراچی مفتی محمد رفیع عثمانی طویل علالت کے بعد کراچی میں انتقال کر گئے، ان کی عمر 86 برس کی تھی۔ رپورٹ کے مطابق مفتی مولانا رفیع عثمانی کی نماز جنازہ کل بروز اتوار 20 نومبر 9 بجے دارالعلوم کورنگی میں ادا کی جائے گی۔ مرحوم رفیع عثمانی جامعہ دارالعلوم کراچی کے صدر اور دارالمدارس العربیہ کے سرپرست اعلیٰ تھے۔ وہ تقسیم ہند سے قبل ہندوستان کے مشہور قصبہ دیوبند میں 21 جولائی 1936 کو پیدا ہوئے تھے۔ مفتی محمد رفیع عثمانی و فاق المدارس العربیہ پاکستان کے نائب صدر، کراچی یونیورسٹی اور ڈا یونیورسٹی کے سنڈیکیٹ رکن، اسلامی نظریاتی کونسل، رویت ہلال کمیٹی اور زکو وعشر کمیٹی سندھ کے رکن اور سپریم کورٹ آف پاکستان اپیلٹ بینچ کے مشیر بھی رہے۔رفیع عثمانی مفتی اعظم پاکستان مفتی محمد شفیع عثمانی کے بڑے صاحب زادے تھے۔ انہوں نے ابتدائی تعلیم اپنے والد مفتی اعظم دیوبند محمد شفیع دیوبندی سے پائی۔ ان کا شمار پاکستان کے سرکردہ علما میں ہوتا تھا، انہوں نے درجن بھر کتابیں لکھیں۔مفتی اعظم پاکستان محمد رفیع عثمانی نے ابتدائی تعلیم اور حفظ قرآن کا آغاز دارلعلوم دیوبند سے کیا اور 1947 میں خاندان کے ہمراہ ہجرت کر کے پاکستان آئے تو آپ کی عمر 12 سال کی تھی۔انہوں نے 1976 میں مفتی شفیع عثمانی کے انتقال کے بعد دارالعلوم کراچی کا انتظام سنبھال لیا اور ان کی کاوشوں سے دارالعلوم کراچی کا شمار آج پاکستان کے بڑے تعلیمی اداروں میں ہوتا ہے۔ مفتی رفیع عثمانی کو 1995 مفتی اعظم ولی حسن ٹونکی کے انتقال کے بعد علمی خدمات پر علما کرام نے مفتی اعظم پاکستان کا منصب دیا اور اہم مواقع پر رہنمائی کی۔


Recent Post

Popular Links