معاشی بحران میں بری طرح پھنس گیا برطانیہ جلد ہی امریکہ، یورپ اور چین کی معیشتوں کو لگے گا جھٹکا!

RushdaInfotech November 19th 2022 urdu-news-paper
معاشی بحران میں بری طرح پھنس گیا برطانیہ جلد ہی امریکہ، یورپ اور چین کی معیشتوں کو لگے گا جھٹکا!

لندن-18نومبر(ایجنسی)برطانیہ اس وقت معاشی بحران کی زد میں ہے- گزشتہ حکومتوں کے ذریعہ لیے گئے خراب معاشی فیصلوں، یورپی یونین سے باہر نکلنا، کووڈ بحران اور پھر روس-یوکرین جنگ نے برطایہ کی حالت انتہائی خستہ کر دی ہے- نومنتخب وزیر اعظم رشی سنک معیشت کو بہتر بنانے کیلئے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں، لیکن اس کے اثرات کچھ دیر سے ہی مرتب ہو پائیں گے- برطانیہ کے موجودہ حالات کو دیکھتے ہوئے صاف کہا جا سکتا ہے کہ ملک معاشی مندی کے بھنور میں پھنستے ہوئے مزید بدحالی کی طرف جا رہا ہے-حالانکہ برطانیہ ہی نہیں، دنیا کے کچھ دیگر ممالک بھی تیزی کے ساتھ معاشی بحران کی طرف بڑھ رہے ہیں - اگر موجودہ عالمی حالات کا جائزہ لیا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ کچھ بڑے ممالک جلد ہی مشکلات کا سامنا کریں گے- ماہرین کا ماننا ہے کہ ہندوستان پر ابھی براہ راست معاشی بحران کا اثر نہیں پڑے گا، لیکن امریکہ، یورپ اور چین جیسی معیشتوں کا مندی میں پھنسنا تقریباً طے ہے-جہاں تک برطانیہ کا سوال ہے، برطانوی حکومت کے آزاد فورکاسٹر(پیشین گو)نے کہا ہے کہ برطانیہ میں گزشتہ آٹھ سالوں میں لوگوں کی جو آمدنی بڑھی تھی، اس کا گزشتہ دو سالوں سے چل رہی معاشی مندی میں صفایا ہو گیا ہے- رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ برطانیہ میں زندگی جینے کے خرچ میں جو اضافہ ہوا ہے، یہ لوگوں کی بڑھی ہوئی آمدنی سے زیادہ ہو گئی ہے- برطانوی حکومت کی آفس فار بجٹ ریسپانسبلٹی نے کہا ہے کہ 100بلین پاؤنڈ کی سرکاری امداد کے باوجود حقیقی گھریلو آمدنی دو سالوں سے لگاتار کم ہو رہی ہے اور یہ اپریل 2024تک 7فیصد کم ہو جائے گی-بتایا جاتا ہے کہ معیشت پہلے سے ہی معاشی بحران کی زد میں ہے، جو پروڈکشن کو 2فیصد تک کم کر دے گا اور اس بحران میں پھنس کر پانچ لاکھ سے زیادہ لوگوں کی ملازمتیں چلی جائیں گی- برطانوی معیشت کو لے کر یہ اندازہ برطانوی حکومت کے وزیر مالیات جیریمی ہنٹ نے ظاہر کیا ہے- حالانکہ انھوں نے معاشی بحران اور توانائی بحران کے دوران برطانوی عوام کو حمایت کا وعدہ کیا ہے اور کہا ہے کہ حکومت نے سال 2027-28تک قرض کو کنٹرول میں لانے کا عزم کیا ہے-بہرحال، مندی کے اندیشہ کو دیکھتے ہوئے امیزون کے بانی اور سابق سی ای او جیف بیجوس نے لوگوں سے کار اور ٹی وی جیسی مہنگی چیزوں کو خریدنے سے منع کیا ہے- انھوں نے ایک انٹرویو میں کہا کہ گلوبل اکونومی کی حالت ٹھیک نہیں ہے- اس وجہ سے آنے والے دنوں میں مندی آ سکتی ہے- امریکی عوام سے مخاطب ہوتے ہوئے بیجوس کہتے ہیں کہ مندی کا اثر طویل مدت تک رہ سکتا ہے- اس لیے امریکہ کے لوگوں کو مہنگی چیزوں کو خریدنے سے بچنا چاہیے-عالمی سطح پر معیشت کی خراب حالت کو دیکھتے ہوئے سنٹر فار اکونومک پالیسی اینڈ پبلک فائنانس (سی ای پی پی ایف)کے ماہر معیشت ڈاکٹر سدھانشو کمار کا بھی ایک بیان سامنے آیا ہے- ان کا کہنا ہے کہ مندی کے خطرے سے بچنے کیلئے لوگوں کو اپنے اخراجات کم کرنے چاہئیں - پیسے بچا کر ایک ایمرجنسی فنڈ تیار کرنے کی کوشش کرنی چاہیے- کم از کم چھ ماہ کے مشکل حالات کیلئے تو فنڈ ضرور تیار کر لینا چاہیے- اس کیلئے مہنگی چیزوں کی خریداری بند کر دینی چاہیے-


Recent Post

Popular Links