آرایس ایس کے پروردہ مولاناعمیرالیاسی کا بے تکابیان ”موہن بھاگوت اس ملک کے راشٹرپتا ہیں“، الیاسی کا سرٹیفکیٹ

RushdaInfotech September 23rd 2022 urdu-news-paper
آرایس ایس کے پروردہ مولاناعمیرالیاسی کا بے تکابیان  ”موہن بھاگوت اس ملک کے راشٹرپتا ہیں“، الیاسی کا سرٹیفکیٹ

نئی دہلی:22ستمبر(ایجنسی)2024میں ہونے والے لوک سبھاانتخابات کے پیش نظر آر ایس ایس نے مودی حکومت کی غلط پالیسیوں اور ناکامیوں پر پردہ ڈالنے کیلئے ایک باربھر کمرکس لی ہے۔پے درپے مسلمانوں کے ساتھ ہمدردی کا اظہاراور مسلمانوں سے ملاقاتوں کا دورشروع کردیاہے۔لیکن بڑی بڑی داڑھی والے ایک عالم دین کے آرایس ایس کے سربراہ موہن بھاگوت کے سامنے بچھ جانے پر حیرت کا اظہارکیاجارہاہے۔کسی سے ملاقات میں کسی کو کوئی اعتراض نہیں لیکن کسی کے حق میں وہ باتیں کرنا جوسراسرہے ہی نہیں،غلط ہے اور بسا اوقات وہ جرم بھی ہے۔ حالانکہ یہ بات ہرایک کو معلوم ہے کہ عمیرالیاسی آر ایس ایس کے پروردہ ہیں۔اپنی شکل و شباہت سے غیرمسلموں اور عام مسلمانوں میں یہ پیغام جاتاہے کہ مسلمانوں کے رہبر ہیں،جبکہ حقیقت اس کے برعکس ہے۔آر ایس ایس چیف موہن بھاگوت اور عمیر احمد الیاسی کی ملاقات لوگوں کے درمیان موضوع بحث بنی ہوئی ہے۔ تقریباً ڈیڑھ گھنٹے تک چلی دونوں کی ملاقات میں کیا باتیں ہوئیں، اس تعلق سے بہت زیادہ خبریں تو سامنے نہیں آئی ہیں، لیکن اس ملاقات کے بعد امام عمیر الیاسی نے کچھ میڈیا اداروں سے بات کرتے ہوئے جو بیانات دیئے ہیں وہ قابل توجہ ہیں۔ امام عمیر الیاسی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ہمارا(ہندو-مسلم)ڈی این اے ایک ہی ہے، صرف عبادت کرنے کا طریقہ الگ ہے۔ ایک دیگر بیان میں انھوں نے موہن بھاگوت کو اس ملک کا راشٹرپتا بتایا اور کہا کہ وہ ہندو-مسلم اتحاد اور بھائی چارہ کا پیغام عام کر رہے ہیں۔موہن بھاگوت سے ملاقات کے بعد عمیر احمد الیاسی نے دینک بھاسکر کو انٹرویو دیتے ہوئے کئی اہم باتیں سامنے رکھیں۔ انہوں نے بتایا کہ آر ایس ایس چیف ان
کی دعوت پر شمالی دہلی واقع مدرسہ تجوید القرآن کا دورہ کرنے آئے تھے۔ موہن بھاگوت اس دوران مدارس کے بچوں سے بھی ملے۔ بھاگوت کے ساتھ آر ایس ایس سے منسلک ڈاکٹر کرشن گوپال، اندریش کمار اور رام لال بھی موجود تھے۔ ایک سوال کے جواب میں امام عمیر الیاسی نے کہا کہ آر ایس ایس چیف کا امام آرگنائزیشن کے دفتر میں آنا اچھی خبر ہے۔اس طرح بیانات صرف موہن بھاگوت کو خوش کرنے کیلئے ہیں۔اس سے عمیرالیاسی کا وقارمجروح ہورہاہے۔ وہ مزید کہتے ہیں کہ موہن بھاگوت آج ہمارے راشٹر رشی ہیں۔ وہ اس ملک کے راشٹرپتا ہیں۔ راشٹرپتا کا ہمارے پاس آنا خوشی کی بات ہے۔ پربھات خبر کے نمائندہ نے جب امام عمیر الیاسی سے پوچھا کہ رام نومی اور حجاب جیسے ایشوز کے درمیان موہن بھاگوت سے ملاقات کا لوگوں میں کیا پیغام جاتا ہے، تو انھوں نے جواب دیا کہ حقیقت یہی ہے کہ آپ اپنا نظریہ بدلیے، نظارہ بدلیے۔ آپس میں مل کر محبت سے رہیں، یہی ہمارا پیغام ہے۔


Recent Post

Popular Links