وزیراعلیٰ ادھو اورشیوسینادونوں بحران کی زد میں آپریشن لوٹس کا ہدف نہ صرف ادھو کی کرسی چھیننا بلکہ شیو سینا پارٹی کو بھی چھیننا ہے

RushdaInfotech June 23rd 2022 urdu-news-paper
وزیراعلیٰ ادھو اورشیوسینادونوں بحران کی زد میں   آپریشن لوٹس کا ہدف نہ صرف ادھو کی کرسی چھیننا بلکہ شیو سینا پارٹی کو بھی چھیننا ہے

ممبئی-22جون(ایجنسی)دو دن سے حکومت بچانے والے ادھو ٹھاکرے اب اپنی پارٹی کو بچانے کی کوشش کر رہے ہیں اور باغی ایکناتھ شنڈے کے سامنے بیک فٹ پر نظر آ رہے ہیں - شندے کو تجویز دی گئی ہے کہ وہ آگے آئیں اور بات کریں اور اگر شیوسینا ایم ایل ایز بولیں تو سی ایم کیا ہے، پارٹی سربراہ کا عہدہ بھی چھوڑنے کو تیار ہیں - اس کے بعد پوار نے ادھو کو مشورہ دیا کہ بحران کو ٹالنے کیلئے شنڈے کو وزیر اعلیٰ بنایا جائے-لیکن، شنڈے کا رویہ جارحانہ ہے- وہ اتحاد سے باہر ہونے کی شرط پر بضد ہیں - جب ادھو نے شندے کو فیس بک لائیو پر بات کرنے کی پیشکش کی تو شندے نے ٹویٹ کر کے جواب دیا- لکھا:اتحاد میں میل نہیں ہے اور شیوسینا اس میں کمزور ہو رہی ہے-کانگریس-این سی پی مضبوط ہو رہی ہے- اس اتحاد سے باہر نکل کر مہاراشٹر کے مفاد میں فیصلہ لینا ضروری ہے-
گوہاٹی-22جون (ایجنسی) ادھوٹھاکرے کی قیادت والی کانگریس،این سی پی اور شیوسینا کی مخلوط حکومت ہی صرف بحران کی زد میں نہیں بلکہ خودشیوسینا پارٹی بھی ادھوٹھاکرے کے ہاتھ سے نکلتی ہوئی نظرآرہی ہے-اسی لئے ادھوٹھاکرے نے کہاہے کہ میں تمام عہدے سے دستبراد ہونے کیلئے تیارہوں،بس میرے سامنے آکر اپنے مسائل پیش کریں -باغی شیوسینا لیڈر ایکناتھ شندے دیگر پارٹی ایم ایل ایز کے ساتھ آج صبح بی جے پی کے زیر اقتدار آسام میں گوہاٹی پہنچے- ہوائی اڈے پر بی جے پی لیڈر سوشانتا بورگوہین اور پلب لوچن داس نے ان کا استقبال کیا- ایکناتھ شندے نے دعویٰ کیا کہ انہیں شیوسینا کے 55 میں سے 40/ ایم ایل ایز اور6 آزاد امیدواروں کی حمایت حاصل ہے- شندے کو پارٹی کے 37 / ایم ایل اے کی حمایت کی ضرورت ہے تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ انہیں انحراف مخالف قانون کے تحت نااہلی کی کارروائی کا سامنا نہ کرنا پڑے- شندے نے کہا کہ وہ شیو سینا سے الگ نہیں ہو رہے ہیں اور ممبران اسمبلی بالا صاحب ٹھاکرے کے ہندوتوا نظریے کو آگے بڑھائیں گے- انہوں نے کہا کہ ہم نے بالاصاحب ٹھاکرے کی شیو سینا کو نہیں چھوڑا اور نہ چھوڑیں گے- ہم ہندوتوا پر یقین رکھتے ہیں -آسام کیلئے روانہ ہونے سے پہلے، ایکناتھ شندے اور پارٹی کے دیگر ایم ایل اے گجرات کے سورت کے ایک ہوٹل میں ڈیرے ڈالے ہوئے تھے- انہیں گوہاٹی منتقل کرنے کا اقدام چیف منسٹر ادھو ٹھاکرے کے ساتھ ان کی ٹیلی فونک بات چیت کے فوراً بعد سامنے آیا-ادھو ٹھاکرے نے ایکناتھ شندے سے کہا تھا کہ وہ دوبارہ غور کریں اور پارٹی میں واپس آئیں - ذرائع نے بتایا کہ شندے نے مطالبہ کیا تھا کہ سینا بی جے پی کے ساتھ اپنا اتحاد بحال کرے اور مشترکہ طور پر ریاست پر حکومت کرے- رپورٹس بتاتی ہیں کہ شیو سینا کے ایم ایل ایز کو بی جے پی نے گوہاٹی منتقل کیا تاکہ سینا لیڈروں کے ساتھ مزید تصادم سے بچا جا سکے-بی جے پی کے کئی لیڈروں نے سورت کے ہوٹل میں ایکناتھ شندے سے بھی ملاقات کی کیونکہ یہ قیاس آرائیاں ہیں کہ شیوسینا کے باغی لیڈر دیگر ایم ایل اے کے ساتھ بی جے پی میں شامل ہو سکتے ہیں -چونکہ حکومت بحران میں ہے، شیو سینا نے اپنے باقی ایم ایل اے کو ممبئی کے مختلف ہوٹلوں میں رکھا ہے- شندے کو منگل کی سہ پہر پارٹی کے چیف وہپ کے عہدے سے برطرف کر دیا گیا-انہوں نے اپنے ٹویٹر بائیو سے شیو سینا کو ہٹا کر جوابی کارروائی کی- نیشنلسٹ کانگریس کے سربراہ شرد پوار نے کہا کہ بحران شیوسینا کا اندرونی معاملہ ہے- مسٹر پوار نے یہ بھی کہا کہ وہ تین پارٹیوں کی حکومت کیلئے پوری طرح پابند ہیں - انہوں نے اپوزیشن بی جے پی کے ساتھ کسی بھی اتحاد کو بھی مسترد کردیا-
شیوسینا کے 34 باغی ممبرانِ اسمبلی نے لکھا گورنر کو لکھا، شندے کو اپنا لیڈر بتایا:مہاراشٹر میں ادھو ٹھاکرے کی حکومت سیاسی سازشوں کی شکار ہے، اسی درمیان ایک اور جھٹکا لگا ہے- شیوسینا کے 34/ ایم ایل ایز نے پارٹی لیڈر ایکناتھ شندے کی حمایت میں گورنر کو خط لکھا ہے- رپورٹ کے مطابق گورنر کو بھیجے گئے ایم ایل ایز کے دستخط والے خط میں انہوں نے ایکناتھ شندے کو اپنا لیڈر قرار دیا ہے-دوسری جانب مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ ادھو ٹھاکرے نے پارٹی ایم ایل اے کے ہنگامی اجلاس سے خطاب کیا ہے- تاہم ایکناتھ شندے نے اس ملاقات کو غیر قانونی قرار دیا ہے- وہیں اپنے خطاب میں ادھو ٹھاکرے نے کہا ہے کہ شیوسینا اور ہندوتوا میں کوئی فرق نہیں ہے- ہم نے بالاصاحب کے اصولوں کو نہیں چھوڑا-بتایا جا رہا ہے کہ شیوسینا کے باغی لیڈر ایکناتھ شندے نے،جو گوہاٹی میں خیمہ زن ہیں، مہاراشٹر کے گورنر بھگت سنگھ کوشیاری سے ورچوئل میٹنگ کیلئے وقت مانگا ہے-


Recent Post

Popular Links