پاکستان کو جوابدہ ٹھہرانے کا وقت آچکا ہے:ہندوستان

RushdaInfotech October 6th 2021 urdu-news-paper
پاکستان کو جوابدہ ٹھہرانے کا وقت آچکا ہے:ہندوستان

اقوام متحدہ۔5 /اکتوبر (یو این آئی) ہندوستان نے پاکستان پر کثیر الجہتی فورم کے تقدس کو پامال کرتے ہوئے جھوٹا پروپیگنڈہ کرنے کی کوششوں، نفرت اور تشدد کو بھڑکانے کے لئے اقوام متحدہ کے اسٹیجوں کا غلط استعمال کرنے پر سخت ہدف تنقید بنایا۔ہندوستان نے اپنی ’جوابی حق‘میں پہلی کمیٹی کی جنرل میٹنگ (تخفیف اسلحہ اور بین الاقوامی سلامتی کے مسائل) میں کہا کہ دہشت گردوں کی میزبانی اور فعال طور پر مدد کرنے کے پاکستان کے عمل کو دیکھتے ہوئے وہ بین الاقوامی امن کے اہم معاملات سے نمٹنے والی اس کمیٹی میں اس سے کسی تعمیری شراکت کی توقع کیسے کی جا سکتی ہے۔اقوام متحدہ میں ہندوستان کے مستقل مشن کے مشیر اے امرناتھ نے کہا کہ ہندوستان کے خلاف پاکستان کے بے بنیاد الزامات حقیقت میں ایک ایسی قوم کی طرف سے افزودہ ہیں جو مسلمانوں کے خلاف فرقہ وارانہ تشدد کی حوصلہ افزائی کر رہی ہے اور اقلیتوں کے حقوق پر ظلم کر رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان نے مرکز کے زیر انتظام ریاست جموں و کشمیر اور لداخ کے حوالے سے ہندوستان پر کئی بے بنیاد الزامات لگائے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہ ہندوستان کے اندرونی معاملات سے متعلق ہے اور جموں و کشمیر کا پورا علاقہ ملک کا جزولاینفک ہے۔مسٹر امرناتھ نے بتایا کہ پاکستان کی تمام کوششوں کے باوجود دنیا اس کے دھوکے کو دیکھ رہی ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ پاکستان کو جوابدہ ٹھہرایا جائے اور اسے اقوام متحدہ کے پلیٹ فارم کا غلط استعمال کرنے اور نفرت پھیلانے کی اجازت نہ دی جائے۔مسٹر امرناتھ نے بتایاکہ ہندوستان ایک ذمہ دار ملک کی حیثیت سے بین الاقوامی معاہدوں کے تحت اپنی ذمہ داریوں پر سختی سے عمل کرتا ہے اور اسے کسی ایسے ملک سے مشورے کی ضرورت نہیں ہے جس کے پاس جوہری مواد اور ٹیکنالوجی کی غیر قانونی برآمد کا ریکارڈ ہو۔انہوں نے بتایا کہ پاکستان اقوام متحدہ کے اصولوں کا احترام نہیں کرتا۔ اس کے وزیر اعظم، اسامہ بن لادن جیسے عالمی دہشت گردوں کو شہید قرار دیتے ہیں۔ اس ملک کے دہرے رویہ کا اس سے بڑا کیا ثبوت ہو سکتا ہے؟مسٹر امرناتھ نے کہا کہ پہلی کمیٹی کے پاس ایک وسیع ایجنڈا ہے جس میں تخفیف اسلحہ اور بین الاقوامی سلامتی سے متعلق عالمی مسائل سے نمٹنا ہے۔ یہ دو طرفہ یا علاقائی مسائل کو حل کرنے کا فورم نہیں ہے۔ہم اس بات کا اعادہ کرنا چاہیں گے کہ علاقائی سلامتی کے مسائل کو پہلی کمیٹی کے خیال میں کوئی جگہ نہیں ہے۔ اس کمیٹی کو نہ صرف واضح طور پر پاکستان کے مذموم اور شیطانی منصوبوں کو مسترد کرنا چاہئے بلکہ اجتماعی طور پر پاکستان کی طرف سے کمیٹی کے کام کو سیاسی بنانے اور اس کے مینڈیٹ کو ہائی جیک کرنے کی بار بار کوششوں کی مذمت بھی کرنی چاہئے۔


Recent Post

Popular Links