پیگاسس پر4.8کروڑ ڈالر کا خرچ کس کی جیب سے ہوا؟شیوسینا

RushdaInfotech July 26th 2021 urdu-news-paper
پیگاسس پر4.8کروڑ ڈالر کا خرچ کس کی جیب سے ہوا؟شیوسینا

ممبئی-25جولائی(ایجنسی) شیو سینا لیڈر اور راجیہ سبھا کے رکن سنجے راوت نے پیگاسس جاسوسی معاملہ میں ایک مرتبہ پھر بی جے پی حکومت پر حملہ بولتے ہوئے اس کی فنڈنگ کی جانچ کرانے کا مطالبہ کیا- خیال رہے کہ مرکزی حکومت پر الزام عائد ہو رہا ہے کہ اس نے اسرائیلی سافٹ ویئر پیگاسس کی مدد سے ملک کے300سے زیادہ سیاسی لیڈروں، صحافیوں اور وزراء کے فون ٹیپ کیے-شیو سینا کے ترجمان ’سامنا‘ میں شائع ہونے والے مضمون میں سنجے راوت نے لکھا کہ صرف2019میں پیگاسس کے ذریعے50فون کی جاسوسی کرنے پر80لاکھ ڈالر روپے خرچ ہوئے- اس حساب سے300فون کی جاسوسی پر4.8کروڑ ڈالر روپے خرچ ہو گئے- انہوں نے کہا کہ یہ اعداد و شمار تو صرف2019 کے ہیں -2020 اور2021میں اس سے بھی زیادہ رقم خرچ ہوئی ہوگی- سنجے راوت نے سوال اٹھایا کہ یہ رقم کس کی جیب سے خرچ ہوئی! اس معاملہ کی جانچ کے بعد ہی اس کا انکشاف ہو سکے گا-سنجے راوت کے مطابق 38ہندوستانی صحافیوں کے فون ہیک کرنے کا انکشاف ہوا ہے- اس کے علاوہ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ دنیا بھر کے تقریباً 180صحافیوں کے فون کی جاسوسی کی گئی- اس کے بعد خبر آئی کہ کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی، سابق الیکشن کمشنر اشوک لواسا اور موجود مرکزی وزیر اشونی ویشنو بھی پیگاسس کے نشانہ پر تھے-سنجے راوت نے اپنے مضمون میں لکھا کہ فہرست میں 100/ ایسے صحافیوں کے نام شامل ہیں جو بی جے پی کی کرتوتوں کا پردہ فاش کر رہے ہیں - ایک صحافی کا تعلق جھارکھنڈ سے ہے جنہوں نے وہاں کے قبائلی افراد کو فرضی انکاؤنٹر کے دوران ہلاک کرنے کے معاملہ کو بے نقاب کیا-
انہوں نے کہا کہ پیگاسس کے ذریعے جاسوسی کرانے کا معاملہ ہیروشیما میں جوہری بم گرائے جانے سے کم خطرناک نہیں ہے، وہاں تو لوگ مارے گئے تھے یہاں لوگوں کی آزادی کو قتل کیا جا رہا ہے-

 


Recent Post

Popular Links