چامراج پیٹ عید گاہ معاملہ میں بی بی ایم پی کو وقف ٹریبیونل کانوٹس

RushdaInfotech August 13th 2022 urdu-news-paper
چامراج پیٹ عید گاہ معاملہ میں بی بی ایم پی کو وقف ٹریبیونل کانوٹس

بنگلورو:12/اگست(سالار نیوز) شہر کی چامراج پیٹ عید گاہ کوسرکاری املاک قرار دیتے ہوئے حال ہی میں بروہت بنگلورو مہا نگر پالیکے کے جائنٹ کمشنر کی طرف سے جو حکم نامہ جاری کیا گیا اس کو کرناٹک اسٹیٹ بورڈ آف اوقاف نے کرناٹک وقف ٹریبیونل میں چیلنج کیا ہے اور ٹریبیونل سے گزارش کی ہے کہ بی بی ایم پی کے ایک ذیلی افسر کی طرف سے جاری اس حکم نامہ کو کا لعدم قرار دیا جائے۔ جمعرات کے روز اس سلسلہ میں ریاستی وقف بورڈ کی طرف سے ٹریبیونل کے سامنے عرضی دائر کی گئی اور جمعہ کے روز ٹریبیونل کے جج ایم ایف پٹھان نے اس عرضی کو سماعت کیلئے منظور کرتے ہوئے بی بی ایم پی کے چیف کمشنر اور جائنٹ کمشنر کو ایک ہنگامی نوٹس جاری کی گئی ہے۔وقف بورڈ کی طرف سے ٹریبیونل کے سامنے اس معاملہ میں عرضی دائر کرنے والے وکیل زبیر نے بتایا کہ ٹریبیونل سے درخواست کی گئی ہے کہ بی بی ایم پی کے جائنٹ کمشنر کی طرف سے عید گاہ کی زمین کو محکمہ محصولات کی ملکیت قرار دیتے ہوئے جو یکطرفہ حکم صادر کیا گیا ہے اس کا کوئی قانونی جواز نہیں ہے اس لئے اس حکم کو کالعدم قرار دیا جائے۔ انہوں نے بتایا کہ عرضی کی سماعت ممکن ہے کہ یوم آزادی تقریبات کے فوری بعد ہو۔ اس دوران ریاستی وقف بورڈ کے چیرمین شافع سعدی نے بتایا کہ بی بی ایم پی سے وقف بورڈ نے چامراج پیٹ عید گاہ کی زمین کیلئے کھاتہ منظور کرنے کی درخواست دی تھی نہ کہ اس کی ملکیت کے متعلق کوئی مقدمہ دائر کیا تھا جس پر جائنٹ کمشنر نے حکم صادر کر دیا۔ انہوں نے کہا کہ بی بی ایم پی جو خود اس زمین پر اپنی ملکیت کا دعویٰ کر رہی ہے،اسے یہ اختیار بالکل نہیں کہ اس زمین کی ملکیت کسی اور کے نام کردے۔ چیرمین نے بتایا کہ بی بی ایم پی کے اس حکم نامہ کا اجراء دراصل چامراج پیٹ عید گاہ کیس میں سپریم کور ٹ کے فیصلہ کی صریح توہین ہے اس لئے وقف بورڈ اس معاملہ میں بی بی ایم پی کے خلاف سپریم کور ٹ میں توہین عدالت کا کیس درج کرنے کے ساتھ ساتھ ہائی کورٹ میں بی بی ایم پی کے تازہ حکم کے خلاف رٹ عرضی دائر کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔ اگلے دو چار دنوں کے اند ریہ دونوں عرضیاں دائر کر دی جائیں گی۔


Recent Post

Popular Links