بی جے پی حکومت کا اڑیل فیصلہ،کہا چامراج پیٹ عیدگاہ میں قومی پرچم سرکاری افسر لہرائیں گے محکمہ محصولات کی ملکیت پر کسی کو اعتراض ہے تو شکایت درج کرے: اشوک

RushdaInfotech August 12th 2022 urdu-news-paper
بی جے پی حکومت کا اڑیل فیصلہ،کہا چامراج پیٹ عیدگاہ میں قومی پرچم سرکاری افسر لہرائیں گے  محکمہ محصولات کی ملکیت پر کسی کو اعتراض ہے تو شکایت درج کرے: اشوک

بنگلورو:11اگست(سالار نیوز)شہر کی چامراج پیٹ عید گاہ کے تنازع پرلگی آگ میں گھی ڈالنے کا کام کرتے ہوئے ریاستی وزیر محصولات آر اشوک نے کہا ہے کہ اب جبکہ بی بی ایم پی کا فیصلہ آچکا ہے کہ چامراج پیٹ عید گاہ کی زمین سرکاری ہے، اس لئے اس میدان میں یوم آزادی کے موقع پر قومی پرچم سرکاری افسرکی طرف سے ہی لہرایا جائے گا،البتہ اس موقع پر اگر مقامی رکن پارلیمنٹ یا اسمبلی حاضر رہنا چاہتے ہیں تو حاضر رہ سکتے ہیں۔ اس سلسلہ میں ایک میٹنگ کے بعد اشوک نے اعلان کیا کہ چامراج پیٹ عید گاہ کے سلسلہ میں یہ طے ہوا ہے کہ چامراج پیٹ میدان میں کسی ادارے یا انجمن کو قومی پرچم لہرانے نہیں دیا جائے گا۔ مقامی رکن اسمبلی ضمیر احمد خان کو بھی یہ موقع نہیں دیا جائے گا۔ ضلع کے اسسٹنٹ کمشنر قومی پرچم لہرائیں گے۔قومی پرچم لہرانے کے ضابطہ کی پابندی کرتے ہوئے کوئی بھی شریک ہو سکتا ہے۔ یہ فیصلہ آیا ہے کہ یہ زمین محکمہ محصولات کی ہے اسی لئے اسی محکمہ کی طرف سے یوم آزادی کا پرچم لہرایا جائے گا۔فی الحال یہ املاک محکمہ مالگزرای کی ہے آنے والے دنوں میں اس کو بی ڈی اے کے حوالے کرنا ہے یا بی بی ایم پی کے یا محکمہ اس املاک کو برقرار رکھے گا اس پر فیصلہ وزیر اعلیٰ سے بات چیت کر کے لیا جائے گا۔ اگر کسی نے اس موقع پر قانون ہاتھ میں لینے کی کوشش کی یا گڑ بڑ کی تو اس کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اس زمین کی ملکیت کے بارے میں کسی کو اگر اعتراض ہے تو اس کے بارے میں وہ محکمہ محصولات میں اعتراضات داخل کر سکتے ہیں۔کسی عدالت نے اس زمین کی ملکیت بی بی ایم پی یا وقف بور ڈ کو نہیں دی ہے۔اس ضمن میں ماہرین قانون سے مشورہ کیا جائے گا۔ اس ضمن میں سپریم کور ٹ نے جو حکم سنایا ہے اس کی پابندی کی جائے گی۔ اس حکم کے مطابق فی الحال اس میدان میں موجود کسی ڈھانچے کو ہٹا نے یا کوئی تعمیر کرنے کی اجازت نہیں ہے۔ فی الحال یوم آزادی کا پرچم لہرایا جائے گا آنے والے دنوں میں کسی مذہبی سرگرمی کیلئے اجازت دینے یا نہ دینے کے بارے میں وزیر اعلیٰ سے مشورے کے بعد طے کیا جائے گا۔


Recent Post

Popular Links