کووڈ کی دوسری اور ممکنہ تیسری لہر کے خدشات کے باوجود بی بی ایم پی نے2,589کروڑ روپئے جائیدادا ٹیکس کے طور پر وصول کئے

RushdaInfotech January 18th 2022 urdu-news-paper
کووڈ کی دوسری اور ممکنہ تیسری لہر کے خدشات کے باوجود بی بی ایم پی نے2,589کروڑ روپئے جائیدادا ٹیکس کے طور پر وصول کئے

بنگلورو17جنوری(سالار نیوز)کووڈ کی دوسری لہر اور ممکنہ تیسری لہر کے درمیان ہی بروہت بنگلور مہا نگر پا لیکے(بی بی ایم پی) نے جاریہ ما لی سال کے9ماہ کے دوران جملہ2,589 کروڑ روپیوں کا جائیداد ٹیکس وصول کیا ہے۔ بی بی ایم پی کے اہم آمدنی والے جائیداد ٹیکس کی وصولی سے بی بی ایم پی نے معاشی بحران سے تھوڑی بہت راحت حاصل کی ہے۔آن لائن اور چالان کے ذریعہ2021-22مالی سال کے اپریل سے دسمبر تک جملہ2,589کروڑ روپیوں کا جائیداد ٹیکس وصول کرنے میں کامیاب رہا ہے۔مذکورہ ٹیکس کی رقم میں اپریل کے ماہ میں سب سے زیادہ796کروڑ اور سب سے کم نومبر کے ماہ میں 86کروڑ روپئے جمع ہو ئے ہیں۔2019-20کے ما لیاتی سال کے دوان جملہ2,681کروڑ اور2020-21کے ما لیاتی سال کے دوران2,777کروڑ روپئے جائیداد ٹیکس کے طور پر حاصل کئے تھے۔ مذکورہ دونوں ما لیات سال کی بہ نسبت جاریہ مالیاتی سال کے 9ماہ کے دوران2,589کروڑ روپئے جائیداد ٹیکس کے طور پر حاصل کئے ہیں۔بی بی ایم پی افسران نے توقع کی ہے کہ جاریہ ما لی سال کے اختتام تک جائیداد ٹیکس کی وصولی میں مزید اضافہ ہو سکتا ہے۔ انہوں نے بتا یا کہ ہر ہفتہ بی بی ایم پی نے ٹیکس وصولی مہم چلا رہا ہے۔جن مالکان کی جانب سے جائیدادا ٹیکس کی ادا ئیگی میں بے توجہی کا مظاہرہ کر رہے ہیں انہیں نوٹس جاری کر تے ہو ئے فوری جائیداد ٹیکس جمع کرنے پر زور دے رہا ہے۔بی بی ایم پی افسران کے مطابق اپریل کے ماہ میں 796کروڑ،مئی کے ماہ میں 478کروڑ، جون کے ماہ میں 433کروڑ،جو لائی کے ماہ میں 195 کروڑ، اگست کے ماہ میں 151کروڑ،ستمبر میں 213کروڑ،اکتوبر کے ماہ میں 111کروڑ،نومبر کے ماہ میں 86کروڑ اور دسمبر کے ماہ میں 126کروڑ روپئے جائیدادا ٹیکس کے طور پر وصول کئے ہیں۔


Recent Post

Popular Links