2021 میں پاکستان ٹاپ کرکٹ ممالک کی میزبانی کے لئے تیار

RushdaInfotech November 22nd 2020 urdu-news-paper
2021 میں پاکستان ٹاپ کرکٹ ممالک کی میزبانی کے لئے تیار

اسلام آباد،21 /نومبر(آئی این ایس) سری لنکن ٹیم کی بس پر 2009 میں ہوئے دہشت گردانہ حملے کی وجہ سے تقریباً ایک دہائی سے ٹسٹ میچوں کی میزبانی کرنے میں ناکام رہنے والے پاکستان کا کہنا ہے وہ 2021 میں جنوبی ایشیاء، نیوزی لینڈ، انگلینڈ اور ویسٹ انڈیز جیسے اہم ممالک کی میزبانی کے لئے تیار ہے۔پاکستان کرکٹ بورڈ کے چیف ایگزیکٹو وسیم خان نے کہا کہ ہم دیگر کرکٹ بورڈ کے ساتھ تعلقات کو بہتر بنانے پر کام کر رہے ہیں۔جنوبی افریقہ دو ٹسٹ میچوں کی سیریز کھیلنے کے لئے جنوری میں پاکستان کا دورہ کرنے والا ہے، جو ورلڈ ٹسٹ چمپئن شپ کا حصہ ہے۔ اس کے بعد اسے تین میچوں کی ٹی20-سیریز میں حصہ لینا ہے۔ نیوزی لینڈ کو ستمبر2021 میں تین ون ڈے اور پانچ ٹی20- میچ اور پھر انگلینڈ کو دوٹی20- میچوں کے لئے دورہ کرنا ہے۔ 2005 کے بعد یہ انگلینڈ کا پہلا دورہ پاکستان ہوگا۔پی سی بی نے دسمبر میں ویسٹ انڈیز کے خلاف ہوم سیریز کا بھی ارادہ کیا ہے۔خان نے کہاکہ ہمارے لئے اگلے آٹھ دس مہینے ڈومیسٹک کرکٹ کے نقطہ نظر سے بہت اہم ہیں۔انہوں نے کہاکہ ہم کرکٹ آسٹریلیا کے ساتھ بھی تبادلہ خیال کر رہے ہیں۔ وہ 2022 کے سیزن کے دورے پر جارہے ہیں، ہم چاہتے ہیں کہ وہ زیادہ وقت کے لئے یہاں آئیں۔ سری لنکن ٹیم پر 2009 میں دہشت گردی کے حملے کے بعد پاکستان میں بین الاقوامی کرکٹ کے دروازے بند کردیئے گئے تھے۔ اس کے بعد زمبابوے پاکستان جانے والی پہلی ٹیم بنی۔ انہوں نے 2015 میں محدود اوورز کی سیریز کے لئے پاکستان کا دورہ کیا۔گذشتہ سال سری لنکا نے پانچ پانچ روزہ میچوں کے لئے پاکستان کا دورہ کیا تھا۔ بنگلہ دیش کو بھی دو میچوں کے لئے پاکستان کا دورہ کرنا تھا لیکن دوسرا ٹسٹ ایک ٹسٹ کے بعد کورونا کی وجہ سے معطل کردیا گیا تھا۔اس دوران پاکستان سپر لیگ ڈومیسٹک ایونٹ میں آسٹریلیا کے شین واٹسن اور جنوبی افریقہ کے ڈیل اسٹین اور اے بی ڈویلیئرز جیسے عظیم بین الاقوامی کرکٹ نے شرکت کی۔خان نے کہا کہ ان بین الاقوامی کھلاڑیوں کی آمد سے بورڈ کو مثبت جواب ملا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ان میں سے بہت سے کھلاڑی واپس اپنے ممالک گئے اور کہا کہ پاکستان کھیلنے کے لئے سب سے محفوظ مقامات میں سے ایک ہے۔انہوں نے کہاکہ یہ وہ کرکٹرز ہیں جو اپنے اپنے کرکٹ بورڈ سے وابستہ ہیں۔ تاہم خان کو ابھی تک ہندوستان اور پاکستان کے مابین کرکٹ دوبارہ شروع ہونے کی امید نہیں ہے۔ مسئلہ کشمیر پر دوطرفہ خراب تعلقات کی وجہ سے دونوں پڑوسی ممالک ورلڈ کپ، چمپئنز ٹرافی اور ایشیاء کپ جیسے بڑے بین الاقوامی مقابلوں میں صرف ایک دوسرے کے خلاف کھیلتے ہیں۔


Recent Post

Popular Links