ڈی جے ہلی اور کے جی ہلی کے شہید نوجوانوں کے ورثاء کو معاوضہ امیر شریعت کے ہاتھوں ضمیر احمد خان نے فی خاندان 5لاکھ روپے کی رقم اد ا کردی

RushdaInfotech November 22nd 2020 urdu-news-paper
ڈی جے ہلی اور کے جی ہلی کے شہید نوجوانوں کے ورثاء کو معاوضہ امیر شریعت کے ہاتھوں ضمیر احمد خان نے فی خاندان 5لاکھ روپے کی رقم اد ا کردی

بنگلورو۔21/نومبر(سالار نیوز)شہر کے ڈی جے ہلی اور کے جی ہلی علاقہ میں ہوئے تشدد کے دوران ہوئی پولیس فائرنگ میں مارے گئے نوجوانوں کے ورثاء کو ہفتہ کے روز امیر شریعت کرناٹک مولانا صغیر احمد خان رشادی کے ہاتھوں رکن اسمبلی ضمیر احمد خان کی طرف سے 5لاکھ روپے فی خاندان کے حساب سے 20لاکھ روپے کی رقم دے دی گئی۔ تشدد کے فوری بعد اس علاقے کا دور ہ کرنے اور فائرنگ میں شہید ہونے والے نوجوانوں کے خاندان والوں کے گھر وں کی حالات زار دیکھنے کے بعد ضمیر احمد خان نے اعلان کیا تھا کہ وہ ان کے ورثاء کو اپنی طرف سے فی خاندان 5لاکھ روپے کی رقم ادا کریں گے۔ لیکن اس کے بعد علاقے میں طویل مدت تک امتناعی احکامات اور پھر خود ان کے کوویڈ سے متاثر ہوجانے کے سبب ا س رقم کی ادائیگی میں تاخیر ہوئی۔ ہفتہ کے روز دارالعلوم سبیل الرشاد میں مارے گئے نوجوانوں کے ورثاء کو امیر شریعت کرناٹک مولانا صغیر احمد خان رشادی کے ہاتھوں یہ رقم ادا کردی گئی۔ مولانا صغیر احمد نے اس موقع پر ضمیر احمدخان کی طرف سے کئے گئے اس کارنامہ کو مستحسن قرار دیا اور کہا کہ اس پسماندہ علاقے میں تشدد کے دوران مارے گئے نوجوانوں کے غریب خاندانوں کی معاشی حالت انتہائی خستہ تھی جس کو دیکھنے کے بعد ضمیر احمد نے اپنے طور پر ان خاندانوں کی مدد کرنے کا وعدہ کیا اور علمائے کرام کی موجود گی میں انہوں نے اپنے اس وعدے کو پورا کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس علاقے میں بڑی تعداد میں بے قصور نوجوانوں کو گرفتار کر کے گزشتہ دو تین ماہ سے مقید رکھا گیا ہے ان نوجوانوں کی رہائی کے لئے جدوجہد جاری ہے اس میں کامیابی کے لئے دعاؤں کی اشد ضرورت ہے۔ ضمیر احمد خان نے اس موقع پر کہا کہ تشدد کے بعد جب انہوں نے علاقے کا دورہ کیا اور شہید نوجوانوں کے گھروں کے حالات دیکھے تو ان سے رہا نہیں گیا۔ حکومت کی طرف سے بھی ان نوجوانوں کے ورثاء کو معاوضہ دینے سے انکار کردیا گیا۔ اس لئے انہوں نے اعلان کیا کہ وہ ان نوجوانوں کے ورثاء کو فی خاندان 5لاکھ روپے ادا کریں گے انہوں نے اس وعدہ کو وفا کیا ہے۔ تشدد کے سلسلہ میں سابق میئر سمپت راج کی گرفتاری کے بارے میں انہوں نے کہا کہ ایسا نہیں لگتا کہ شہر کی پولیس نے سمپت راج کو بے وجہ گرفتار کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ سمپت راج کے خلاف سی سی بی نے تحقیق کر کے عدالت میں چارج شیٹ بھی داخل کردی ہے جس کے بعد انہیں گرفتار کیا گیا ہے اس لئے وہ کے پی سی سی صدر ڈی کے شیو کمار سے مانگ کرتے ہیں کہ سمپت راج کے خلاف تادیبی کارروائی کی جائے اور انہیں پارٹی کی بنیادی رکنیت سے برخاست کیا جائے۔اس موقع پر کانگریس لیڈر بی کے الطاف خان، سید مجاہد،علمائے کرام و دیگر ذمہ داران موجود تھے۔


Recent Post

Popular Links