”دنیا پر مشکلات اللہ کی طرف سے امتحان“ خطبہئ حج میں شیخ عبداللہ بن سلیمان نے امت ِ مسلمہ کو صبر کی تلقین کی،10ہزار فرزندان توحید سعادت حج سے سرفراز

RushdaInfotech July 31st 2020 urdu-news-paper
”دنیا پر مشکلات اللہ کی طرف سے امتحان“ خطبہئ حج میں شیخ عبداللہ بن سلیمان نے امت ِ مسلمہ کو صبر کی تلقین کی،10ہزار فرزندان توحید سعادت حج سے سرفراز

مکہ مکرمہ۔30جولائی (یو این آئی)کورونا سے متاثر ماحول میں دوران حج یہاں مسجد نمرہ میں شیخ عبداللہ بن سلیمان نے خطبہ حج میں کہا کہ دنیا پر مشکلات اللہ کی طرف سے امتحان ہیں۔انہوں نے کہا کہ اللہ ویسے انسان کے لئے مشکل نہیں آسانی چاہتا ہے لیکن قرآن میں ہے کہ معمولی مصیبت کا مقصد بڑے عذاب سے آگاہی ہے۔خطبے میں صبر سے کام لینے کی تلقین کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اہل تقویٰ کی صفات میں اولین صبر ہے اور اللہ تعالیٰ نے خوشی اورغم دونوں میں صبر کرنے کو کہا ہے۔ صبر پر کار بند رہنے والوں کیلئے خیر کی بشارت ہے۔ حضورصلعم نے اپنی زندگی خیر کیلئے وقف کر رکھی تھی۔حج کے رکن اعظم وقوف عرفہ کی ادائیگی کیلئے عازمین میدان عرفات میں موجود ہیں جہاں روح پرور خطبہ حج دیتے ہوئے شیخ عبداللہ بن سلیمان نے کہا کہ مسلمان ہر طرح کی بدعت اور خرافات سے دور رہیں، اللہ کے حکم سے ہی مصیبتیں آتی اور دور ہوتی ہیں۔ تقویٰ اختیار کرنے والے کی ہر تنگ دستی دور کردی جاتی ہے تقویٰ سے انسان برائیوں سے بچتا ہے لیکن آج بڑی تعداد میں لوگ اللہ کی بندگی سے غافل نظر آتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جو کچھ زمین اور آسمانوں میں ہے سب اللہ کا ہے۔ شیخ عبداللہ بن سلیمان نے کہا کہ عبادات سے ہی مصیبت سے چھٹکارا ملتا ہے۔ مشکلات دائمی نہیں۔اللہ کا فرمان ہے کہ ہر مشکل کے بعد آسانی ہے۔ قرآن مجید میں عدل و انصاف کا درس دیا گیا ہے،اللہ کے احکامات پر عمل پیرا ہونا ہی تقویٰ ہے، اللہ نے انبیا کو تذکیہ نفس کے لئے بھیجا، اللہ نے مرد وعورت کو باہمی احترام اور خیال رکھنے کا درس دیا ہے۔اسلام نے معاشرے میں باہمی احترام اور اچھے اخلاق کا درس دیا ہے، اسلام رشتے داراور عزیز واقارب کا خیال رکھنے کابھی درس دیتا ہے، اس کے علاوہ اسلام غربا اور مساکین کے حقوق کا تحفظ رکھنے کابھی درس دیتا ہے۔شیخ عبداللہ بن سلیمان نے کہا کہ اسلام صدقہ وخیرات کے ذریعے مشکلات حل کرنے کا درس دیتا ہے، اسلام کسی بھی قسم کے فتنے کو پھیلانے سے روکتا ہے، اس کے علاوہ اسلامی تعلیمات ہر اس چیز سے اجتناب کا درس دیتی ہیں جو انسانی صحت کے لئے مضر ہوں۔ قبل ازیں مسجد الحرام میں غلاف کعبہ تبدیل کردیا گیا تھا۔
کسی عازمِ حج میں کورونا کی تصدیق نہیں ہو
سعودی عرب کی وزارتِ صحت کا کہنا ہے کہ کسی بھی عازمِ حج میں کورونا وائرس کی تصدیق نہیں ہوئی۔حج کا رکنِ اعظم وقوفِ عرفات ادا کیا جا رہا ہے، مناسکِ حج کے دوران کورونا وائرس سے بچاؤکیلئے خصوصی حفاظتی اقدامات کئے گئے ہیں۔اس موقع پر ایک بیان میں سعودی وزارتِ صحت نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کی وباء کے دوران کوئی بھی حاجی کورونا سے متاثر نہیں پایا گیا۔ تاریخ میں پہلی مرتبہ عازمین حج کیلئے صرف ایک میقات مقررکی گئی، مکہ مکرمہ کے گورنر کا اس حوالے سے ایک بیان میں کہنا ہے کہ اس سال محدود حج کے باوجود مختلف محکموں کے 40 ہزار اہلکار عازمین کی خدمت پر مامور ہیں۔انہوں نے کہا کہ حج و عمرہ زائرین کے لیے خصوصی ایئر پورٹ بنانے کا منصوبہ زیرِ غور ہے، یہ خصوصی ایئر پورٹ مکہ مکرمہ کے الفیصلیہ محلے میں قائم کیا جائے گا۔گورنر مکہ مکرمہ کا یہ بھی کہنا ہے کہ یہ نیا قائم کیا جانے والا خصوصی ایئر پورٹ میدانِ عرفات سے قریب ہو گا۔اس سال حج کے موقع پر شیطان کو کنکریاں مارنے کا رکن زمینی اور تیسری منزل سے کرایا جائے گا، دونوں منزلوں پر شیطان کو کنکریاں مارنے کے انتظامات مکمل کر لئے گئے ہیں۔ حاجیوں کو رہائش سے جمرات کے پل تک لانے کیلئے گالف کی گاڑیوں کا انتظام کیا گیا ہے۔بتایا گیا ہے کہ تقریب میں کلید بردار کعبہ،منتظمین،سعودی حکام اور غلاف ساز کسوہ فیکٹری کے ذمہ دار بھی شریک ہوئے۔خانہ کعبہ کو غسل دینے کے بعد خالص سونے، چاندی کی تاروں اور خالص ریشم سے تیار کردہ غلاف کعبہ تبدیل کیا گیا۔ غلاف کی تیاری میں 700 کلو گرام سے زائد خالص سونا، چاندی اور 675 کلو گرام خالص ریشم استعمال کی گئی۔ غلاف کعبہ کی لمبائی پچاس فٹ اور چوڑائی 35 سے 40 فٹ ہے۔ جب کہ اس کی تیاری پر 24 ملین سعودی لاگت آئی۔ غلاف کعبہ کے چار کونوں پر سورہئ اخلاص منقش ہے۔جبکہ مختلف آیات پر مشتمل 16 پٹیاں الگ الگ سے جڑی ہیں۔ غلاف کعبہ کو مکہ مکرمہ کی دارالکسوہ فیکٹری میں تیار کیا گیا۔یہ کارخانہ ہر سال بیت اللہ کا ایک نیا غلاف تیار کرتا ہے جسے 9 ذی الحج کو پورے تزک و احتشام کے ساتھ خانہ کعبہ کی زینت بنایا جاتا ہے۔
غیر قانونی طور پر شرکت کی کوشش، 936 گرفتار
سعودی حکام کا کہنا ہے کہ رواں سال حج کے مناسک کی ادائیگی کے دوران بغیر اجازت مقامات مقدسہ میں داخل ہونے کی کوشش کرنے والے 936/ افراد کو حراست میں لے لیا گیا ہے۔ حج سکیورٹی فورسز کے ترجمان کے مطابق گرفتار کئے گئے افراد کے خلاف جرمانوں کے ساتھ ساتھ تمام ضروری اقدامات اٹھا ئے گئے ہیں۔ سعودی عرب میں رواں سال مناسک حج کی ادائیگی چہارشنبہ کے روز شروع کی گئی۔ اس دوران کورونا وائرس سے بچاؤ کے لئے خصوصی انتظامات کئے گئے ہیں اور سعودی حکومت نے محدود پیمانے پر 10 ہزار مقامی اور غیر ملکی افراد کو حج میں شرکت کی اجازت دی ہے۔ سعودی حکومت نے رواں ماہ کے اوائل میں غیر متعلقہ افراد کے مناسک حج کے مقامات میں داخلے پر بھاری جرمانے عائد کرنے کا اعلان کیا تھا۔ اس دوران بار بار داخلے کی کوشش کرنے والے افراد کو دوگنا جرمانہ کیا جائے گا۔ اس کے علاوہ سعودی حکام نے غیر قانونی عازمین حج کو ٹرانسپورٹ مہیا کرنے والوں کو سزا اور جرمانے کی سزا دینے کا اعلان کیا ہے۔

 


Recent Post

Popular Links